کشمیر

حکومت پاکستان مسئلہ کشمیر کے حل کے لیے جارحانہ خارجہ پالیسی اپنائے،چوہدری یاسین

اسلام آباد :آزاد جموں کشمیر قانون ساز اسمبلی میں قائد حزب اختلاف چوہدری محمد یاسین نے کہا ہے کہ بھارت مقبوضہ کشمیر میں سرچ آپریشن کے نام پر کشمیریوں کا قتل عام کر رہا ہے آئے روز محاصرے کر کے نوجوانوں کو قتل اور گرفتار کر کے غائب کیا جا رہا ہے انسانی تاریخ کا سب سے بڑا لاک ڈاؤن جاری ہے ان خیالات کا اظہار انہوں نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا انہوں نے کہا کہ بھارت نے مقبوضہ کشمیر میں نئے اراضی قوانین ڈومیسائل کے ذریعے ار ایس ایس کے غنڈوں کو مقبوضہ کشمیر میں آباد کرنا شروع کر دیا ہے اور زمینوں پر قبضے کر کے اُنہیں فوجی چھاؤنیوں میں تبدیل کیا جا رہا ہے اُنہوں نے کہا کہ آزادی کی پر امن تحریک کو بھارتی مظالم ایک بار پھر پر تشدد تحریک کی طرف لے جا رہے ہیں اُنہوں نے کہا کہ آزادی کی تحریک جاری رہے گی بھارتی مظالم تحریک کو دبا نہیں سکتے انہوں نہیں کہا کہ بین الاقوامی برادری کی ان مظالم پر خاموشی مجرمانہ ہے اُنہوں نے کہا کہ انسانی حقوق کی تنظیمیں بھی بھارت کے سامنے بے بس ہو چکی ہیں اُنہوں نے کہا کہ نئے امریکی صدر سے دنیا نے بہت سی امیدیں وابستہ کر رکھی ہیں اور انہیں نے بھی نفرتیں ختم اور امریکہ کہ وقار بحال کرنے کا اعلان کیا ہے چوہدری محمد یاسین کہتے ہیں کہ نئے امریکی صدر جو بائیڈن اگر مسئلہ کشمیر کے حل کے لیے اقدامات کرتے ہیں تو دنیا میں امریکہ ایک انصاف پسند ملک کی طرح سامنے آئے گا اُنہوں نے کہا کہ حکومت پاکستان حالات کے تقاضوں کے مطابق مسئلہ کشمیر کے حل کے لیے جارحانہ خارجہ پالیسی اپنائے اور پارلیمانی وفود امریکہ سمیت یورپین ممالک کو بھجوائے جو بھارتی مظالم کو بے نقاب کریں

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close