20

جنرل عاصم ڈپلومیسی

اگرچہ روایتی تصور فوجی لیڈروں کو بنیادی طور پر دفاع اور سلامتی سے جوڑتا ہے، لیکن تاریخی مثالیں یہ ظاہر کرتی ہیں کہ کء ممالک کے آرمی چیفس نے اپنی قوموں کی اقتصادی رفتار کو تشکیل دینے میں اہم کردار ادا کیا ہے۔
پارک چنگ ہی، جو ایک سابق فوجی جنرل ہیں، نے 1961 میں ایک بغاوت کے ذریعے جنوبی کوریا میں اقتدار پر قبضہ کیا۔ اپنی صدارت کے دوران پارک نے اقتصادی حکمت عملیوں کا ایک سلسلہ نافذ کیا جسے “دریائے ہان پر معجزہ” کے نام سے جانا جاتا ہے۔ صنعت کاری اور برآمدات سے ہونے والی بھرپور ترقی نے جنوبی کوریا کو جنگ زدہ زرعی معاشرے سے ایک معاشی جن میں بدل دیا۔ سیمسنگ اور ہنڈائی جیسے خاندانوں کے زیرِ کنٹرول کافی گروہوں نے اس معاشی میٹامورفوسس میں اہم کردار ادا کیا۔
عبدالفتاح السیسی، ایک سابق فوجی افسر، نے 2014 میں مصر کی صدارت سنبھالی۔ ان کے دور میں اقتصادی ترقی پر توجہ مرکوز کی گئی ہے، جس میں بنیادی ڈھانچے کے منصوبوں، ملازمتوں کی تخلیق، اور اقتصادی اصلاحات کے لیے اقدامات شامل ہیں۔ان کی قیادت میں کلیدی منصوبوں میں نئے انتظامی دارالحکومت کی تعمیر اور نہر سویز کی توسیع شامل ہے، جس کا مقصد اقتصادی ترقی کو تحریک دینا اور مصر کو ایک علاقائی اقتصادی مرکز کے طور پر کھڑا کرنا ہے۔
جنرل کینان ایورن نے 1980 میں ترکی میں فوجی بغاوت کی اور صدارت سنبھالی۔ اپنے عہدہ کے دوران، انہوں نے ملک کے معاشی چیلنجوں سے نمٹنے کے لیے اقتصادی اصلاحات نافذ کیں، جن میں بلند افراط زر پر کنٹرول اور لوگوں کے لئے قرضوں کی فراہمی شامل ہیں۔ ان اصلاحات کا مقصد معیشت کو مستحکم کرنا اور غیر ملکی سرمایہ کاری کو راغب کرنا تھا، جس سے آنے والے سالوں میں اقتصادی ترقی کی ایک پائیدار مدت بنانے میں مدد ملی۔
2014 میں بغاوت کے ذریعے اقتدار سنبھالنے والے جنرل پریوتھ چان اوچا نے تھائی لینڈ کے معاشی استحکام کو مضبوط کرنے کی کوشش کی۔ ان کی انتظامیہ نے بنیادی ڈھانچے کے منصوبوں، اقتصادی ترقی کے منصوبوں اور غیر ملکی سرمایہ کاری کو راغب کرنے کے اقدامات کی پیروی کی۔ سیاسی تنازعات کے باوجود دہشت فوجی قیادت والی حکومت نے تھائی لینڈ کی اقتصادی بنیاد کو مضبوط کرنے کے لیے فعال طور پر کام کیا۔
آرمی چیف نہ ہوتے ہوئے ایک سابق فوجی افسر لی کوان یو نے پہلے وزیراعظم کے طور پر سنگاپور کی اقتصادی ترقی میں اہم کردار ادا کیا۔ ان کی قیادت نے سنگاپور کو نوآبادیاتی دور کے بعد کی جدوجہد سے ایک عالمی مالیاتی مرکز میں تبدیل کر دیا۔ لی کی پالیسیاں تعلیم، بنیادی ڈھانچے اور غیر ملکی سرمایہ کاری کو راغب کرنے پر مرکوز تھیں، جس نے سنگاپور کی اقتصادی کامیابی کی بنیاد رکھی۔
ڈینگ ژیا پنگ، آرمی چیف نہ ہونے کے باوجود، ایک فوجی پس منظر کے حامل تھے اور چین کی اقتصادی اصلاحات میں نمایاں طور پر حصہ ڈالتے رہے۔ 20 ویں صدی کے آخر میں، ڈینگ کی قیادت نے مارکیٹ پر مبنی اصلاحات متعارف کروائیں جنہوں نے چین کو ایک اقتصادی پاور ہاس بننے پر مجبور کیا۔ ڈینگ کی اقتصادی پالیسیوں کے کلیدی پہلوں میں خصوصی اقتصادی زونز، غیر ملکی سرمایہ کاری کے لیے مناسب اور پرکشش ماحول اور مارکیٹ پر مبنی نقطہ نظر کو اپنانا شامل تھے۔
پاکستان کے موجودہ آرمی چیف جنرل عاصم منیر نے ملک کو درپیش چیلنجز سے نمٹنے کے لیے سرگرم اور بھرپور کردار ادا کیا ہے۔ بیرون ملک اپنے ذاتی اثر و رسوخ کو بھی بروئے کار لاتے ہوئے انہوں نے سویلین حکومت کی مدد کی۔ انہوں کم و بیش 11 غیر ملکی دورے کیے اور تقریبا 17 غیر ملکی سفارتی اور فوجی حکام سے ملاقاتیں کیں۔ان دوروں کے نتیجے میں پاکستان میں سرمایہ کاری، قرض کی واپسی کی مدت میں توسیع اور دفاعی امور پر باہمی تعاون سے متعلق فیصلے ہوئے۔
نومبر 2022 میں پاک فوج کی کمان سنبھالنے کے بعد چیف آف آرمی اسٹاف (COAS) نے سفارتی اور فوجی تعلقات کو مضبوط بنانے کے لیے بین الاقوامی دوروں کا ایک سلسلہ شروع کیا۔ جنوری میں انہوں نے سعودی عرب کا دورہ کیا، جہاں محمد بن سلمان اور دیگر سعودی حکام سے ملاقاتوں کے نتیجے میں سعودی حکومت کی جانب سے پاکستان کو فراہم کیے گئے قرضوں کی ادائیگی کی مدت میں توسیع کی گئی۔ جس کے بعد آرمی چیف نے متحدہ عرب امارات کا دورہ کیا، جس میں پاکستان کے لیے اہم سرمایہ کاری اور دفاعی امور پر بات چیت کی۔ 5 فروری کو ان کے دورہ برطانیہ کے دوران تزویراتی سلامتی کے امور پر غور کیا گیا، جہاں انہوں نے بطور مہمان خصوصی ولٹن پارک میں پائیداری کانفرنس میں بھی شرکت کی۔
11 فروری کو متحدہ عرب امارات کے دورے میں صدر شیخ محمد بن زاید النہیان کے ساتھ مختلف شعبوں میں پاکستان کے لیے قرض کی ادائیگی کی مدت میں توسیع کے حوالے سے بات چیت شامل تھی۔ اپریل میں چین کے تین روزہ دورے کے نتیجے میں دفاع، چین پاکستان اقتصادی راہداری (CPEC) اور ٹیکنالوجی کے معاملات پر معاہدوں پر دستخط ہوئے۔ مشترکہ دفاعی معاہدوں کی تفصیلات حساس نوعیت کی وجہ سے خفیہ رکھی گئیں۔
15 جولائی کو آرمی چیف نے ایران کا دو روزہ دورہ کیا، جس میں ایرانی صدر ابراہیم رئیسی، وزیر خارجہ اور آرمی چیف سے علاقائی سلامتی، امریکہ ایران تعلقات اور دیگر متعلقہ امور پر بات چیت کی گئی۔ 30 جولائی کو پھر متحدہ عرب امارات کے دورے میں مختلف شعبوں میں SIFC کے تحت پاکستان میں سرمایہ کاری کے انتظامات کو حتمی شکل دی گء۔
5 ستمبر کو ازبکستان کے دورے کے دوران ازبک صدر، وزیر دفاع اور عسکری حکام سے ملاقاتوں میں دہشت گردی کے خلاف جنگ اور علاقائی سلامتی کے امور پر مشترکہ حکمت عملی پر اتفاق کیا گیا۔اسی طرح 13 ستمبر کو ترکی کے دورے کے دوران علاقائی سلامتی اور مشترکہ دفاعی مفادات پر بات چیت ہوئی، جہاں ترک صدر نے زلزلے کے دوران پاک فوج کی امدادی کارروائیوں بالخصوص اربن سرچ اینڈ ریسکیو ٹیموں کا شکریہ ادا کیا۔ آرمی چیف کو ان کی خدمات کے اعتراف میں ترک لیجن آف میرٹ سے نوازا گیا۔
24 اکتوبر کو فلسطینی سفیر سے ملاقات میں آرمی چیف نے فلسطین کی مکمل اخلاقی اور سفارتی حمایت کا اعادہ کیا۔ انہوں نے عالمی برادری پر زور دیا کہ وہ فوری جنگ بندی پر عمل درآمد کرے، غزہ میں انسانی امداد فراہم کرے اور 1967 کے جغرافیائی ڈھانچے کی بنیاد پر فلسطینی ریاست قائم کرے۔
آرمی چیف کے یکم نومبر کو آذربائیجان کے دورے میں آذربائیجان کے فوجی حکام کی جانب سے پاکستان کی حمایت کو سراہا گیا اور دوطرفہ تعلقات کو وسعت دینے کے عزم کا اظہار کیا گیا۔ 29 نومبر کو چیف آف آرمی سٹاف نے تیسری بار متحدہ عرب امارات اور کویت کا دورہ کیا اور پاکستان میں سرمایہ کاری کے شعبوں پر حتمی تفصیلی بات چیت کی۔
غیر ملکی دوروں کے علاوہ آرمی چیف نے سعودی عرب، متحدہ عرب امارات، سری لنکا اور چین سمیت 17 ممالک کے سفارتی اور عسکری حکام سے بھی ملاقاتیں کیں۔
ان کا امریکہ کا حالیہ دورہ خاص اہمیت کا حامل ہے کیونکہ یہ کمان سنبھالنے کے بعد ان کا امریکہ کا پہلا سرکاری دورہ تھا۔ اعلی امریکی حکام کے ساتھ ہونے والی بات چیت میں پاکستان امریکہ انسداد دہشت گردی تعاون، ملٹری ٹو ملٹری تعاون، افغانستان سے پیدا ہونے والی صورتحال اور اقتصادی اور سرمایہ کاری کے امور پر تبادلہ خیال کیا گیا۔
آرمی چیف جنرل عاصم منیر نے گزشتہ سال اپنا عہدہ سنبھالنے کے بعد سے امریکہ کا اپنا پہلا دورہ شروع کیا ہے۔ انٹر سروسز پبلک ریلیشنز (آئی ایس پی آر) نے ایک بیان میں اس بات کی تصدیق کرتے ہوئے کہا کہ یہ جنرل منیر کا بطور چیف آف دی آرمی سٹاف (COAS) پہلا دورہ امریکہ ہے۔
پاکستان کے اندر اور بین الاقوامی سطح پر آرمی چیف جنرل عاصم منیر کی پرخلوص کاوشوں کی بدولت ملک میں حالیہ دنوں میں مثبت اقتصادی پیش رفت دیکھنے میں آء ہے۔ قابل ذکر بات ہے کہ پاکستانی آئی ٹی فرموں نے ہانگ کانگ میں ایشیا پیسیفک انفارمیشن اینڈ کمیونیکیشن ٹیکنالوجی الائنس (APICTA) ایوارڈز 2023 میں اہم ایوارڈز حاصل کیے۔ PSO نے پاکستان ریفائنری لمیٹڈ (PRL) میں اپنے 30% سے زیادہ شیئر ہولڈنگ چین کے یونائیٹڈ انرجی گروپ (UEG) کو فروخت کرنے پر اتفاق کیا جس سے 1.5 بلین ڈالر کی خطیر سرمایہ کاری ہوئی اور PRL کی ریفائننگ کی صلاحیت کو 50,000 سے دوگنا کر کے 100,000 بیرل یومیہ پر کرنے کی راہ ہموار ہوء۔
اقتصادی ترقی میں مزید تعاون کرتے ہوئے ایشیائی ترقیاتی بینک (ADB) نے پاکستان میں تین منصوبوں کے لیے 659 ملین ڈالر کی منظوری دی، جس کا مقصد جامع اور پائیدار ترقی کو فروغ دینا ہے۔ تجارت کے شعبے میں، پاکستان کی جنوبی چین کو برآمدات میں جولائی 2022 سے اکتوبر 2023 تک متاثر کن طور پر 65 فیصد اضافہ ہوا۔ بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (IMF) نے روپے کی قدر میں بحالی اور ڈالر کی قدر میں کمی کو نوٹ کرتے ہوئے پاکستان کے اقتصادی منصوبے کی تعریف کی۔ پاکستان اسٹاک ایکسچینج (PSX) نے KSE-100 بینچ مارک کے ساتھ 66,155 پوائنٹس کا سنگ میل عبور کیا۔
نومبر میں قابل ذکر مثبت پیشرفت ہوئی جس میں امریکہ پاکستان کے لیے سب سے زیادہ برآمدات کی منزل بن کر سامنے آیا، تجارتی خسارے میں چار ماہ میں 34.7 فیصد سے زیادہ کی کمی ہوء، اسٹیٹ بینک آف پاکستان (SBP) کے ذخائر میں ایک ہفتے میں 13.6 ملین ڈالر کا اضافہ ہوا، ریفائنری سیکٹر مالی سال 24 کی پہلی سہ ماہی میں منافع بخش ہو رہا ہے، سرحد پار ترسیلات زر کو آسان بنانے کے لیے SBP اور عرب فنڈ کے درمیان تعاون کی شروعات ہوئی، پاکستان اور سعودی عرب نے پاکستانی کارکنوں کے لیے روزگار کے مواقع بڑھانے کے لیے ایک لیٹر آف انٹینٹ (LOI) پر دستخط کیے، ایس پی آئی افراط زر میں 0.06 فیصد کمی ہوء، اکتوبر میں چین کو پاکستان کی برآمدات میں 70 فیصد اضافہ ہوا اور آئی ٹی سروسز کی برآمدات سے پاکستان 654.930 ملین ڈالر کما رہا ہے۔
جنرل عاصم کی سفارتی کوششوں کی بدولت سندھ میں گیس اور کنڈینسیٹ کے نئے ذخائر کی دریافت ہوء اور سٹاف لیول معاہدے کی منظوری کے لیے 11 جنوری کو آئی ایم ایف بورڈ کے اجلاس کے انعقاد جیسی قابل ذکر پیش رفت بھی ہوء ہے۔ 100 بلین ڈالر کا برآمدی وژن ان مخلصانہ کوششوں کا ٹھوس نتیجہ ہے، پاکستان کا چین کے ساتھ تجارتی خسارے کو کم کرنے کا بھی ہدف ہے۔
پاکستان اس وقت قابل ذکر پیش رفت کا مشاہدہ کر رہا ہے جس میں راولپنڈی میں 40 ارب روپے کے منصوبوں کا آغاز اور گیس کی سخت پالیسی کا نفاذ جس کا مقصد MARI، OGDC اور PPL میں 2 بلین ڈالر کی چینی سرمایہ کاری کی راہ ہموار کرنا ہے شامل ہیں۔ مزید برآں، پی ایس ایکس سکوک کی نیلامی میں 573 ملین روپے کی خطیر رقم بچاء گء۔ پھر چار مہینوں کے دوران افغانستان کو پاکستان کی برآمدات میں 2.65 فیصد کا مثبت اضافہ دیکھا گیا ہے اور جنوبی چین کو برآمدات میں جولائی سے اکتوبر تک 65 فیصد کا غیر معمولی اضافہ ہوا ہے۔ مزید یہ کہ پاکستان کے ایل این جی پراجیکٹس میں چین اور متحدہ عرب امارات سے 500 ملین ڈالر کی سرمایہ کاری کا امکان ہے۔
قارئین، جنرل عاصم منیر کی کامیاب ڈپلومیسی پاکستان کی معیشت پر مثبت اثرات مرتب کر رہی ہے۔ قوم آرمی چیف جنرل عاصم منیر اور پاک فوج کا ملک کی بہتری کے لیے مخلصانہ کوششوں پر شکریہ ادا کرتی ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں